مگدھ یونیورسٹی میں ہنگامہ، وی سی سے ملنے آئی طالبات پر حملہ، 5 طالبات زخمی رجسٹرار وائس چانسلر جان بچا کر بھاگے

گیا : (اے بی این ایس ) مگدھ یونیورسٹی میں ہفتہ کے روز فزیوتھراپی ڈیپارٹمنٹ کے طلباء پر حملہ کیا گیا۔ طلباء تعلیمی بحران کے حوالے سے منولال لائبریری کے باہر وائس چانسلر اور رجسٹرار سے ملنے کی کوشش کر رہے تھے۔ لیکن وہاں موجود لوگوںنے زبردستی طلباء کو ہٹانا شروع کر دیا۔ طلبہ نے احتجاج کیا تو مارپیٹ میں پانچ طلبہ زخمی ہوگئے۔ زخمی طلباء کا علاج جاری ہے۔معلومات کے مطابق ڈیڑھ سال تک امتحان نہ ہونے کی وجہ سے فزیو تھراپی کے طلبہ ناراض ہوگئے اور وی سی سے ملنے منولال لائبریری گئے۔ جہاں سیمینار چل رہا تھا۔ وی سی سیمینار میں شریک تھے۔ طلبہ کو وائس چانسلر سے ملنے نہیں دیا گیا۔ چنانچہ لڑکوں اور لڑکیوں کا ایک گروپ لائبریری کی عمارت کے باہر گیٹ پر بیٹھ گیا اور وائس چانسلر کے آنے کا انتظار کرنے لگا۔تقریباً تین گھنٹے بعد وائس چانسلر اور رجسٹرار ایک ہی گاڑی میں باہر آنے لگے۔ گیٹ پر بیٹھے طلبہ کے گروپ نے گاڑی روکی اور وی سی سے ملنا چاہا۔ اس سلسلے میں وہاں موجود کچھ لوگوں نے طلباء کو زبردستی وی سی کی گاڑی کے سامنے سے ہٹانے کی کوشش کی۔ ہاتھا پائی ہوئی اور دونوں طرف کے لوگ آپس میں لڑ پڑے۔
طالبات نے الزام لگایا کہ وی سی کے کہنے پر کچھ طالبات کے ساتھ حملہ کیا گیا۔ اس کے بعد جب دیگر طلبہ مشتعل ہو گئے تو وی سی کی گاڑی طالبات کے اوپر چڑھ گئی، جس میں پانچ طالبات اور کچھ طالبات شدید زخمی ہو گئیں۔ زخمی طالبات نے ایم یو پولیس اسٹیشن میں شکایت بھی درج کرائی ہے۔ طالبات کا کہنا تھا کہ وی سی کی آمد کی اطلاع پر ہم ساتھی طالبات کے ہمراہ اپنے مسائل لے کر وی سی سے ملنے گئے۔ لیکن ہمیں ملنے نہیں دیا گیا۔ تو سکون سے باہر گیٹ پر بیٹھ گئے۔ اس دوران جب وی سی باہر نکلنے لگے تو ان کے ساتھ موجود لوگوں نے ہم سے لڑائی شروع کر دی۔ جس میں کئی لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ بعض کی حالت تشویشناک ہے۔ اس کے بعد افراتفری کا ماحول تھا۔ ایم یو تھانے کی پولیس نے چارج سنبھال کر مشتعل طلباء کو منایا۔
ناراض طلبہ نے کہا کہ مگدھ یونیورسٹی میں شدید تعلیمی بحران پیدا ہوگیا ہے، اب طلبہ کو کوئی امید نظر نہیں آتی۔ طلباء اپنے مستقبل کو بچانے کے لیے پریشان ہیں۔ 22-2018 کا سیشن ڈیڑھ سال تاخیر کا شکار ہوا۔ 2021 کے بعد امتحان نہیں لیا گیا۔ نہ ہی نتیجہ وقت پر جاری کیا جا رہا ہے۔ یہاں کے عہدیدار طلبہ کے مستقبل سے کھیلنے کے لیے پرعزم ہیں۔ جب اس معاملے پر حکام سے سوال کیا جاتا ہے تو وہ سیدھا جواب نہیں دیتے اور ہم پر حملہ کرتے ہیں۔ آخر ہمیں کیا کرنا چاہیے؟ کچھ جواب ملے۔سرکل پولیس انسپکٹر پنکج کمار اور ایم یو تھانیدار اویناش کمار نے بتایا کہ پانچ سے چھ طالبات زخمی ہوئیں۔ زخمیوں نے تحریری شکایت درج کرائی ہے۔ طالبات نے واقعے کی ویڈیو بھی بنائی ہے۔ جس میں کچھ لوگ لڑتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔ ویڈیو فوٹیج کی بنیاد پر ان کی شناخت کی جا رہی ہے۔

About awazebihar

Check Also

مجلس علماء جھارکھنڈ ضلع لاتیہار کا انتخاب عمل میں آیا

صدرمفتی گلزار قاسمی ، نائب صدر مولانا عبد الواجد چترویدی اور جنرل سکریٹر مولانا رضوان …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *