Breaking News

مرکزی حکومت پٹنہ یونیورسٹی کو سنٹرل یونیورسٹی بنانےکیلئے تیار نہیں

پٹنہ، 05 فروری (اے بی این ) وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے بی سی آئی ،این آئی ٹی پٹنہ کے ایمفی تھیٹر میں منعقدہ ایلومنائی میٹ-2023 کا باقاعدہ طور پر شمع روشن کرکے افتتاح کیا۔ تقریب میں سرسوتی وندنا گایا گیا۔ بہار کالج آف انجینئرنگ-نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ٹکنالوجی، پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے زیر اہتمام اس سابق طلباء کے اجلاس میں وزیر اعلیٰ نے سوسائٹی کی طرف سے شائع کردہ کتابچہ کا اجرا کیا۔ وزیر اعلیٰ نے گولڈن جوبلی سال کے موقع پر تیار کردہ سووینئر کا بھی وزیراعلی نے اجرا کیا۔
سوسائٹی کے سکریٹری-کم-وائس چانسلر پٹنہ یونیورسٹی پروفیسر گریش کمار چودھری نے وزیر اعلیٰ کو پھولوں کاگلدستہ اورشال پیش کر کے استقبال کیا۔ وزیر اعلیٰ نے الیکٹرانکس اور کمیونیکیشن کے شعبہ کے سربراہ پروفیسر بھرت گپتا کو بہترین محکمہ کے لئے شال اور مومینٹو دے کر کے اعزاز سے نوازا۔ بی سی ای ۔این آئی ٹی پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے سابق صدر جناب روی شنکر سنہا اور سکریٹری جناب گریش کمار چودھری کو بھی شال اور مومینٹو سے نوازا گیا۔ وزیر اعلیٰ نے انسٹی ٹیوٹ کے سال 1962-63 کے ڈائمنڈ جوبلی بیچ، سال 1972-73 کے گولڈن جوبلی بیچ اور سال 1992-93 کے سلور جوبلی بیچ کے سابق طلباء کو وزیر اعلیٰ نے اعزاز سے نوازا۔ بی سی ای-این آئی ٹی پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے سکریٹری پروفیسر گریش کمار چودھری نے سال 1973 کے گولڈن جوبلی بیچ کے سابق طالب علم وزیر اعلی جناب نتیش کمار کو یادگاری تحفہ پیش کرتے ہوئے ان کا اعزاز دیا۔
میں ان لوگوں سے مل کر بہت خوش ہوں۔ ہم بھی 1973 میں یہاں سے پاس آؤٹ ہوئے۔ امتحان 1972 میں ہی ہونا تھا لیکن 16 ماہ کی تاخیر کی وجہ سے 1973 میں امتحان ہوا اور ہم پاس آؤٹ ہو گئے۔ ہمارے بیچ کے شری کوشل کشور مشرا بھی یہاں موجود ہیں۔ وہ اپنی پڑھائی کے دوران بہت متحرک تھے۔ وہ تحریک وغیرہ میں ہماری رہنمائی کرتے تھے لیکن بعد میں وہ پرسکون رہنے لگے۔ ہماری ان کے ساتھ پڑھائی کے دنوں سے ہی دوستی ہے۔ بہت عرصے بعد ان سے ملاقات ہوئی ہے، میں خوش ہوں۔ ہم نے 5 جنوری 2023 سے سمادھان یاترا شروع کی ہے۔
اس دوران ہم لوگوں کے درمیان جاتے ہیں، ان کی باتیں سنتے ہیں اورحکام سے ملاقاتیں بھی کرتے ہیں۔ اس لیے مجھے یہاں پہنچنے میں تھوڑی تاخیر ہوئی ہے۔ سال 2018 میں، ہم نے NIT پٹنہ میں منعقدہ ایلومنائی میٹ میں شرکت کی۔ سال 2019 اور 2020 میں ہم باہر ہونے کی وجہ سے شرکت نہیں کر سکے۔ اس کے بعد کورونا کا دور آیا اور یہ پروگرام 2021 اور 2022 میں نہیں ہو سکا۔ ایک بار پھر 5 سال کے بعد میں 50 سال کے موقع پر میں اپکے درمیان ہوں۔ ہم نے یہیں تعلیم حاصل کی، تحریک میں حصہ لیتے رہے اور بعد میں سیاست میں آگئے۔ تب سے عوام کے مفاد میں کام کر رہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ قابل احترام اٹل بہاری واجپئی کی کابینہ میں شامل تھے۔قابل احترام اٹل جی مجھے بہت پسند کرتے تھے۔ اس وقت انجینئرنگ کالجوں کو این آئی ٹی میں تبدیل کیا جا رہا تھا۔ میں نے بتایا کہ بہار کالج آف انجینئرنگ ملک کے چھ قدیم ترین انجینئرنگ کالجوں میں سے ایک ہے، جو 1924 میں قائم ہوا تھا۔ ہم پٹنہ یونیورسٹی کو سنٹرل یونیورسٹی بنانے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں، لیکن آج تک ایسا نہیں ہوا۔ بہار کالج آف انجینئرنگ کو این آئی ٹی کے طور پر تبدیل کرنے پر زور دیا اور سال 2004 میں اسے این آئی ٹی میں تبدیل کر دیا گیا۔ اس کے بعد کالج کی درمیانی عمارت کو مینٹن رکھتے ہوئے اسے بنایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پٹنہ کی این آئی ٹی دیگر جگہوں کی این آئی ٹی سے بہتر رہی ہے۔ ہماری خواہش ہے کہ یہ سلسلہ مزید آگے بڑھے۔ این آئی ٹی پٹنہ کی توسیع کے لیے بیہٹا میں 125 ایکڑ زمین دی گئی ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ وہاں تعمیراتی کام جلد از جلد مکمل کیا جائے۔ اس کے لیے ریاستی حکومت سے جو بھی مدد درکار ہوگی وہ کی جائے گی۔ جب یہ بیہٹا میں تیار ہو جائے گا تو این آئی ٹی پٹنہ سب سے بڑا اور ترقی یافتہ ہو گا۔ پہلے اس میں کم طلبا کو پڑھنے کی سہولت تھی جو اب بڑھ کر 4500 ہوگئی ہے۔ ہم چاہیں گے کہ زیادہ سے زیادہ طلباء کو بہیٹا میں تعلیم حاصل کرنے کی سہولت میسر ہو۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ انہوں نے ہی بہار کالج آف انجینئرنگ کا نام بدل کر BCENIT رکھا تاکہ کوئی بھول نہ جائے۔ یہاں آئی آئی ٹی کے قیام کے لیے 500 ایکڑ اراضی کا مطالبہ کیا گیا ، جسے فراہم کر دیاگیا۔ اب یہ تیار ہے۔ پی ایم سی ایچ میں 5400 افراد کے علاج کے انتظامات کیے جا رہے ہیں جو کہ دنیا کا سب سے بڑا ہسپتال ہو گا۔
ہمارا کام سب کی خدمت کرنا ہے۔ کسی بھی قسم کے تعمیراتی کام اور سیلاب یا خشک سالی کی صورت میں NIT پٹنہ سے مشورہ کیا جاتا ہے۔ جب تک میں زندہ رہوں گا این آئی ٹی پٹنہ جتنا ترقی کرے گا مجھے خوشی ہوگی گی ۔ آپ سب بچوں کو بڑی بلندیوں کے ساتھ بہتر انداز میں پڑھاتے ہیں۔ ہم جو بھی تعمیراتی کام کرتے ہیں، ہم آپ سے تجاویز لیتے ہیں۔ یہ مستقبل میں بھی دیکھتے رہیں گے۔ مجھے بہت دکھ ہوتا تھا، جب ہم لوگ پڑھتے تھے تو یہاں کوئی لڑکی نہیں پڑھتی تھی۔ اس زمانے میں جب کوئی خاتون یہاں سے گزرتی تھی تو طلبہ کے ساتھ ساتھ پروفیسرز بھی اس کی طرف دیکھتے تھے۔ ہم نے انجینئرنگ اور میڈیکل کی تعلیم میں لڑکیوں کے لیے کم از کم ایک تہائی سیٹیں رکھی ہیں۔ آج مجھے یہاں خواتین کو دیکھ کر بہت خوشی ہورہی ہے۔ مرد اور عورت دونوں کی ترقی سے ہی سماج ترقی کرے گا۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہم نے سال 2013 میں بہار پولیس کی بحالی میں خواتین کو 35 فیصد ریزرویشن دیا تھا۔ اب پولیس فورس میں خواتین کی بڑی تعداد بھرتی کی جا رہی ہے۔ اس کے علاوہ بہار کی تمام سرکاری خدمات میں خواتین کو 35 فیصد ریزرویشن دیا گیا ہے۔ خواتین کو ہر طرح سے آگے بڑھایا جا رہا ہے۔ پہلے خاندان کی غربت کی وجہ سے لڑکیاں لباس نہ ہونے کی وجہ سے تعلیم حاصل نہیں کر پاتی تھیں۔ ہم نے بچیوں کی تعلیم اور ترقی کے لیے بہت سی اسکیمیں شروع کیں۔ اس کے بعد لڑکیوں کی بڑی تعداد سکول جاتی ہے۔
حکومت کی طرف سے انٹر اور گریجویشن پاس کرنے والی طالبات کی بھی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔ ایک سیلف ہیلپ گروپ بنا کر، ہم غریب خاندانوں کی خواتین کو آگے بڑھانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ ہم نے انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کی لیکن نوکری نہیں ملی اور سیاست میں چلے گئے۔ سال 1969 میں یہ بات سامنے آئی کہ انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے والے تمام لوگوں کو نوکری نہیں ملے گی۔ اس کے بعد تحریک شروع ہوئی۔ اس تحریک میں ہم جیل بھی گئے۔ ہم چاہتے ہیں کہ این آئی ٹی پٹنہ زیادہ سے زیادہ پھیلے۔ ہم ہر ضلع میں انجینئرنگ کالج بنا رہے ہیں، آپ بہت اچھا کام کر رہے ہیں، آپ کا کردار اہم ہے۔ اگر این آئی ٹی پٹنہ میں طلباء کی تعداد میں اضافہ ہوتا ہے تو مجھے بہت خوشی ہوگی۔
پروگرام کو B.C.E.N.I.T پٹنہ کے ڈائرکٹر جناب پی کے جین، BCE-NIT پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے سکریٹری مسٹر گریش کمار چودھری اور B.C.E.N.I.T پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے خزانچی جناب سنتوش کمار نے بھی خطاب کیا۔
اس موقع پر وزیراعلی کے او ایس ڈی مسٹر گوپال سنگھ، بی سی ای-این آئی ٹی پٹنہ ایلومنائی سوسائٹی کے ممبران، بی سی ای-این آئی ٹی پٹنہ کے اساتذہ، طلباء اور سابق طلباء کے رشتہ دار موجود تھے۔

 

About awazebihar

Check Also

نابالغ سے شادی کے بعد دو دنوں تک عصمت دری کرتا رہا، پولیس نے کیا گرفتار

پٹنہ: پٹنہ جنکشن سے نابالغ لڑکی کے اغوا کیس میں پٹنہ پولس نے بڑا انکشاف …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *