Breaking News

گورنر اور وزیر اعلیٰ نے امر شہید جبا سہنی کو ان کی برسی پر دلی خراج عقیدت پیش کیا۔

پٹنہ، 11 مارچ(اے بی این) گورنر جناب راجندر وشوناتھ آرلیکر اور وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار نے آج امر شہید جبا سہنی کی برسی کے موقع پر معین الحق اسٹیڈیم، راجندر نگر کے جنوب مغربی کونے میں واقع پارک میں امر شہید جباسہنی کے قد آدم مجسمہ پر گلپوشی کرکے انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔

اس موقع پر ریونیو اور اصلاح اراضی کے وزیر جناب آلوک کمار مہتا، سماجی فلاح کے وزیر جناب مدن سہنی، قانون ساز کونسل کے رکن جناب سنجے کمار سنگھ عرف گاندھی جی، قانون ساز کونسل کے رکن جناب بھیشما سہنی، سابق ایم ایل اے مسٹر ودیا ساگر نشاد، وزیر اعلی کے پرنسپل سکریٹری ڈاکٹر ایس سدھارتھ، محکمہ تعمیرات کے سکریٹری اور پٹنہ ڈویژن کے کمشنر مسٹر کمار روی،وزیراعلی کے او ایس ڈی مسٹر گوپال سنگھ، ڈی ایم مسٹر چندر شیکھر سنگھ، سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس مسٹر راجیو مشرا۔ ، ریاستی شہری کونسل کے سابق جنرل سکریٹری مسٹر اروند کمار سنگھ، ریاستی فوڈ کمیشن کے سابق رکن مسٹر نند کشور کشواہا، بہار چائلڈ رائٹس پروٹیکشن کمیشن کے سابق رکن مسٹر شیوشنکر نشاد، جے ڈی یو لیڈر مسٹر اوم پرکاش سیتو، نشاد لیڈر مسٹر چھوٹے ساہنی۔ اور دیگر اعلیٰ افسران اور معززین نے شرکت کی۔

اس موقع پر محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ کے فنکاروں نے آرتی پوجا، بہار گیت اور امر شہید جبا سہنی کی شخصیت اور کام پر مبنی گیت گائے۔ پروگرام کے بعد وزیر اعلیٰ نے صحافیوں سے بات کی۔ بہار میں کامیابی کے ساتھ مکمل شراب بندی کے مطالعہ کے سلسلے میں چھتیس گڑھ کے وفد سے ملاقات کے بارے میں صحافیوں کے سوال پر، وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار نے کہا کہ یہ دیکھنا اور سمجھنا ہے کہ بہار میں شراب پر پابندی کا کیا اثر ہوا ہے اور کتنا ہوا ہے۔ اس کا فائدہ ہوا، چھتیس گڑھ سے ایک ٹیم یہاں آئی ہے۔ ٹیم نے بھی مجھ سے ملاقات کی ہے۔ ہم نے انہیں ہر چیز سے آگاہ کر دیا ہے۔ بہار میں شراب بندی کے نفاذ کے بعد چھتیس گڑھ کے لوگوں نے مجھے مدعو کیا تھا۔ ہم وہاں گئے۔ چھتیس گڑھ کے موجودہ وزیر اعلیٰ مسٹر بھوپیش بگھیل اس وقت کانگریس پارٹی کے ریاستی صدر تھے۔ ہماری ان سے بھی ملاقات ہوئی تھی۔ بہار میں شراب بندی کو دیکھنے لوگ آرہے ہیں، یہ اچھی بات ہے۔ چھتیس گڑھ سے آئے لوگ شراب بندی کو دیکھ کر بہت خوش ہیں۔ وفد میں ایک خاتون رکن اسمبلی بھی شامل ہیں۔ سماج میں کچھ لوگ گڑبڑ کرنے والے تو ہوتے ہی ہیں۔ 100فیصد لوگ توکبھی ٹھیک نہیں ہو سکتے ہیں۔ سال 2018 میں جب ہم نے شراب بندی کے حوالے سے سروے کیا تھا تو پتہ چلا تھا کہ ایک کروڑ 64 لاکھ لوگوں نے شراب نوشی چھوڑ دی ہے۔ حال ہی میں ایک بار پھر سروے کیا گیا ہے اور یہ بات سامنے آئی ہے کہ اب 1 کروڑ 82 لاکھ لوگوں نے شراب پینا چھوڑ دیا ہے۔ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ 99 فیصد خواتین شراب بندی کے حق میں ہیں جبکہ 92 سے 93 فیصد مرد شراب بندی کے حق میں ہیں۔ شراب بندی بڑی چیز ہے، کچھ لوگ تو ادھر ادھر کرنے والے ہوتے ہی ہیں، یہ فکر کی بات نہیں۔ پہلے لوگ شراب پینے پر اپنا پیسہ خرچ کرتے تھے، اب لوگ اچھی زندگی گزار رہے ہیں۔ لوگ شراب پینے کے بجائے اب سامان خریدنے میں اپنا پیسہ خرچ کر رہے ہیں۔

آر جے ڈی سپریمو جناب لالو پرساد یادو کے رشتہ داروں پر ای ڈی کے چھاپے سے متعلق سوال پر وزیر اعلیٰ نے کہا کہ جن لوگوں پر چھاپے مارے جا رہے ہیں وہ اپنا جواب دے رہے ہیں۔ اس پر ہمارا کیا کہنا ہے؟ ان سب باتوں پر ہم نے شروع سے اب تک کوئی رد عمل نہیں دیا۔ کہیں کچھ ہو جائے تو ہم اس پر کچھ نہیں کہتے۔ جن کے یہاں پر اب چھاپہ مارا گیا ہے، ان کی جگہ پر 5 سال پہلے بھی چھاپہ مارا گیا تھا۔ اب جب کہ ہم دوبارہ اکٹھے ہوئے ہیں،توایک بار پھرچھاپہ ماری ہو رہی ہے۔ جب 2017 میں جط چھاپہ مارا گیا تو ہم نے اس کی وضاحت کرنے کو کہا تھا۔ اس بارے میں کچھ باتیں ہوئیں اور وہاں کے لوگوں نے میرے ساتھ باتیں کرنی شروع کردی۔ ان لوگوں کی باتوں کو مان کر ہم ان کے ساتھ چلے گئے۔ پھر جب ہم ان کے ساتھ آئے تو چھاپہ پھر شروع ہوگیا۔کیا معاملہ ہے یا نہیں ہے یہ توو ہی لوگ بتائیں گے۔ جن کے یہاں چھاپہ مارا گیا ہے وہ تو جوابات دے ہی رہے ہیں تو ہم کو اس پر کیا کہنا ہے؟

مرکزی ایجنسی کے غلط استعمال سے متعلق 9 اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے وزیراعظم کو لکھے گئے خط پر دستخط نہ کرنے کے سوال پر وزیراعلیٰ نے کہا کہ اس میں ایسی کوئی بات نہیں ہے۔ ہم تو انتظار کر رہے ہیں.الگ الگ پارٹیاں الگ الگ کام کرتی ہیں، ان س چیزوں سے ہمارا کوئی مطلب نہیں۔ ہم دن رات کام کرتے رہتے ہیں۔ آپ ہماری سرگرمی دیکھ رہے ہیں۔ سمادھان یاترا کے دوران ہم تمام اضلاع میں گئے اور وہاں کے مسائل کے بارے میں دریافت کیا۔ ہم ان مسائل کو حل کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ہماری صرف ایک خواہش ہے کہ زیادہ سے زیادہ پارٹیاں متحد ہو جائیں۔ ایک بار ہم تمام جماعتوں سے بات کر چکے ہیں۔ کبھی کبھی لوگوں سے گفتگو ہوتی رہتی ہے۔ معمولی کاموں کے لیے کہیں جانے کی ضرورت نہیں۔ تمام پارٹیوں کے لوگ اپنا اپنا کام کرتے رہے ہیں۔ یہاں سات جماعتیں مل کر کام کر رہی ہیں۔ یہاں کوئی دشواری نہیں ہے۔ باقی جن کی جو خواہش ہوتی ہے کرتے ہیں، سب کو حق ہے۔ جب تمام پارٹیوں میں اتحاد ہوگا تو تمام جگہوں پر جانے کی ضرورت پڑی تو ہم جائیں گے۔ میری کوئی ذاتی خواہش نہیں ہے۔ ہم اپنے لیے کچھ نہیں چاہتے ہیں ۔ ہم سب کا فائدہ چاہتے ہیں۔

اپوزیشن اتحاد کے تعلق سے کانگریس سے اپیل کرنے کے سوال پر وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ اپیل کی ہے۔ ہم نے حال ہی میں ہونے والی دو ملاقاتوں میں اس بارے میں بتایا ہے۔ ہم نے اس بارے میں سی پی آئی ایم ایل کی میٹنگ میں بھی کہا تھا اور اس کے بعد پورنیہ میں ہونے والی ساتوں پارٹیوں کی میٹنگ میں بھی کہہ چکے ہیں۔ تمام لوگ مثبت بات کر رہے ہیں ۔
نائب وزیراعلی کو سی بی آئی کے ذریعہ طلب کئے جانے کے سوال پر وزیراعلی نے کہاکہ وہ لوگ کیا کر رہے ہیں وہی جانیں۔ یہ سب کوئی نئی بات نہیں ہے۔ اس سے قبل بھی سمن جاری کیا گیا تھا۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ کوئی خاص مسئلہ ہے۔ چھاپہ 2017 میں ہوا، اس میں کیا ہوا؟ اب 5 سال بعد دوبارہ ایسا ہو رہا ہے۔ اس وقت ایسا کیوں نہیں ہوا؟

بی جے پی رکن پارلیمنٹ جناب سشیل کمار مودی کے بیان پر وزیر اعلیٰ نے کہا کہ سشیل کمار مودی کو روز بولنا پڑتا ہے۔ وہ ہر روز نہیں بولیں گے تو کیسے ہو گا؟ وہ میرے خلاف بھی بولتے رہتے ہیں۔ یہ ہمارے لیے کوئی معنی نہیں رکھتا۔ بہار میں اتحاد بدلنے کی چل رہی باتوں کے سوال پر وزیر اعلیٰ نے کہا کہ کہاں اتحاد بدلنے کی بات ہو رہی ہے۔ ایسی کوئی بات نہیں ہے۔ اس سب کی فکر مت کیجئے۔

 

About awazebihar

Check Also

وزیر اعلیٰ نے بابائے قوم مہاتما گاندھی کے یوم پیدائش پر منعقد پروگرام میں شرکت کی

پٹنہ، 02 اکتوبر 2023:وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار نے آج بابائے قوم مہاتما گاندھی کے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *